Photo Credit: The Sylwyn Foundation

سائنس جوں جوں ترقی کررہا ہے وہ لوگوں کی زندگی میں بہت سی آسانیاں اور تن آسانیاں تو لارہا ہے لیکن ان دھوکوں میں آنے والا انسان ایک ہی “غلط”  کلک پر سب کچھ کھو دیتا ہے۔

دنیا بھر میں مصنوعی ذہانت یعنی آرٹیفیشل انٹیلی جنس نے جہاں لوگوں کے کام کو آسان کیا ہے وہی یہ معاشرے میں دھوکے کا بھی باعث بن رہا ہے۔ تین نوجوانوں کی سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی ایک ویڈیو میں وہ ایک لڑکی کو فون کال پر بتاتے ہیں کہ لڑکی کی ماں نے ان کے سٹور سے خریداری کی ہے اور ادائیگی کے وقت ان کے پاس پچاس ہزار روپے کم تھے اور اسی دوران لڑکی کو یقین دلانے کے لئے اس کی اپنی والدہ سے بات بھی کرادیتے ہیں۔ 

یہی وہ وقت تھا جب لڑکی کو محسوس ہوئے بغیر بھی پچاس ہزار روپے کا ٹیکہ لگ جانا تھا اگر وہ تینوں لڑکے اسے رقم ٹرانسفر کرنے سے روک نہ لیتے۔ لڑکی اپنی ماں سے بات کرنے کے بعد فون کال کاٹنے لگتی ہے تاکہ انہیں دیے ہوئے نمبر پر پیسے ٹرانسفر کردے کہ اس دوران ایک لڑکا انہیں بتاتا ہے کہ ابھی آپ  نے اپنی ماں سے نہیں بلکہ ان کی ماں کی آواز میں بات کرنے والے مرد سے بات کی ہے۔ 

اس دوران وہ اس لڑکی کو بتاتے ہیں کہ اب ہمارے کسی بھی عزیز کی آواز میں بات کرنا کسی کے لئے کوئی مسئلہ نہیں بس اتنا ہونا چاہیئے کہ دھوکہ دینے والے کے پاس آپ کے اس رشتے دار کی تھوڑی سی آواز ہونی چاہیئے۔ جسے کاپی کرکے وہ کسی کی آواز پر لگا لیتے ہیں اور جسے بھی چاہیں دھوکہ دے جاتے ہیں اور یہ سب کچھ ہوتے ہوئے آواز سننے والے کو ایک سیکنڈ کے لئے بھی شک نہیں گذرتا کہ یہ آواز کسی غیر کی ہے۔  

By pkadmin

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *